Monday , 18 June 2018
تازہ شمارے
You are here: Home » تاریخ » حقیقی بحران 2 The Real Crisis
حقیقی بحران 2 The Real Crisis

حقیقی بحران 2 The Real Crisis

حقیقی بحران 2 The Real Crisis

مغربی مفکرین فلاسفر اور دانشور مغربی دنیا کو بخوبی یہ باور کرانے میں کامیاب ہوگئے ہیں۔ کمیونزم کے خاتمے کے بعد اسلام ہی مغرب کی مادر پدر آزاد ، عریاں اور تہذیب و ثقافت سے عاری معاشرے کے لئے حقیقی خطرہ ہے۔
دیکھنا یہ ہے اگر اسلام اور مغرب کے مابین تہذیبوں کی جنگ شروع ہوچکی ہے تو ان میں طاقت کا توازن کیا ہے؟Computer Hope
دولت و طاقت میں مغرب کو مادی بالادستی حاصل ہے لیکن یہ چیزین سلطنتوں کو نہ بچاسکی اور سوویت یونین جیسا ملک جوہری سازوسامان و اقتصادی وسائل کے باوجود خود کو برقرار نہ رکھ سکا۔
اقوام مادی وسائل سے نہیں روحانی جذبوں،وحی کے مضبوط رشتوں سے قائم رہتی ہیں، جس سے اسلام مالا مال ہے۔
عقیدے کو عقیدے سے شکست دی جاتی ہے۔ اسے صرف انفرادیت، جمہوریت، برابری جیسے کھوکھلے نعروں سے شکست نہیں دی جاسکتی ۔
مغربی تہذیب کا اس معاملے میں مدمقابل اسلام ہے، پندرہ سو برسوں سے حرکت میں ہے، جو اب کروٹ لے رہا ہے۔ افسوس یہ وہ تجزیئے ہیں جو مغربی مفکرین نے مسلم ممالک میں براہ راست جارحیت سے کولونیل ایمپائر colonial empire اور دو عالمی جنگوں کے بعد مرتب کی اور جو کمیونزم کی شکست کے بعد ان کا واحد ایجنڈا بن چکا ہے۔
Computer Hope
غور طلب بات یہ ہے مغربی اقوام نے برصغیر میں ابتدائی قدم تجارت اور مشنریز کے تعاون سے جمائے، جس میں سادہ لوح انسانوں کو گمراہ کیا، اہل علم حضرات کیل ئے مشترقین کے نام سے جماعت کھڑی کی گئی باوجود اس کے بنیادی ڈھانچے کو حربی قوت سے کچل دیا گیا. آج بھی کم و بیش اسی نکتے پر کام ہورہا ہے طرزعمل اور ظاہری شکل بدل چکی ہے، دنیا پر تسلط کلونی سے گلوبلائزیشن میں تبدیل ہوگئی، اور عراق، افغان کوہساروں نے یہ باور کرادیا ہے کہ اب جنگ براہ راست اسلام کے خلاف نہیں بلکہ اسلام کے اندر ہوگی۔Computer Hope
جس ملک نے اس آخری نکتے کو سمجھ کر داخلی انتشار پر قابو پالیا وہ بیرونی خطرات سے آزاد ہوسکتا ہے۔

Computer Hope

اس کالم کی دستاویزی فلم دیکھنے کے لئے یہاں کلک کریں .

اس کالم کو آواز کے ساتھ سنیں:

About admin

Scroll To Top